Monthly Archives: September 2016

khyber pukhtun khwa cenima

شہزادہ فہد ۔
دنیا بھر میں تعلیم کے ساتھ ساتھ فلم کے زریعے لو گوں کے ذہنوں کو تبدیل کر نے کے نئے سینما کلچر کی بنیا د رکھی گئی، انیسویں صدی کے آخر سے بیسوں صدی کے اوائل تک برصغیر پاک و ہند کے عام لوگوں کو ”فلم “ جیسی کسی چیز سے کو ئی واقفیت نہ تھی سینما کی تاریخ کے متعلق بتا یا جا تا ہے کہ 1896 عسیوی میں فرانس کے دو بھائی ”لو میئر برادرز “ اپنی ایجاد کر دہ ایک چھو ٹی سے پروجیکٹر مشین لے کر ممبئی آئے اور ایک ہو ٹل میں فلم شو کو آغاز کیا جس کا ٹکٹ دو روپے تھا ، لو میئر برادرز نے 7 جو لا ئی 1896 کو ممبئی کے واٹسن ہو ٹل کے ہا ل میں چار شو دکھائے ہر شو میں تقریبا دوسو افراد نے یہ فلم دیکھی ،سینما میں فلم دیکھنا دراصل شوشل ایونٹ ہے جس میں تمام ہا ل کا اکھٹے ہنسنا،رونااور دیگر جذبات کا یکجا ہونا فطری عمل ہے ، صوبا ئی دارلحکومت پشاور سینما کا رنگین دور رہا ہے ، ہما رے بزرگ فیملی کے ساتھ فلم دیکھنے جا تے تھے پشاور میں سب سے پہلے سینما قصہ خوانی بازار میں میں پہلی جنگ عظیم کے کچھ عرصہ بعد تعمیر کیا گیا یہ عارضی سینما کابلی تھانے کی عمارت کے قریب تھا جہاں خامو ش فلموں کی نما ئش ہو تی تھی ، 1925 کے لگ بھگ پشاور کے ایک ہند و سیٹھ اچر چ رام گھئی نے جس کی قصہ خوانی میں امپیریل شوز کے نام سے جو توں کی دکان تھی جس نے کا بلی دروازے کے باہر ” امپیریل تھیٹر “ کے نسام سے ایک سینما تعمیر کروایا ، یہ پشاور کو پہلا مکمل با ئیسکو پ تھا یہاں پر بھی خا مو ش فلموں کی نما ئش کی جا تی، 1931 میں ہند وستان کی پہلی بولتی فلم ” عالم آرا “ کی نما ئش کی گئی ، اس تھیٹر کا نام بعد میں تبدیل ہو کر ” امپیریل ٹاکیز “ رکھ دیا گیا ، صوبے کا دوسرے با ئیسکو پ کی بنیاد ایک سکھ تا جر دسونتی سنگھ نے رکھی جس کو ” پیکچرہا وس “ کا نام دیا ، کابلی دروازے کا اخری سینما ” دلشاد ٹاکیز “ ( مو جود ہ تصویر محل ) پشاو کے سیٹھ غلام رسول کھوجہ سوداگر چرم نے بنوایا ، یہ سینما آغا جی اے گل نے لیز پر حاصل کیا تھا اور تقسیم پاک و ہند تک ان کے پاس رہا قیام پاکستان کے بعد جب آغا جی اے گل لا ہوا شفٹ ہو ئے تو انہوں نے یہ سینما پشاور کے صابر ی ہو ٹل کے مالک حا جی فیروز صابر ی کی تحویل میں دے دیا جنھوںنے اس کا نام دلشاد ٹاکیز سے تبدیل کر کے تصویر محل رکھ دیا ان سینما ووںسے کابلی دروازہ ایک مکمل سینما ما رکٹ بن گیا تھا ، اسی طر ح پشاور کے سردار ارجن سنگھ نے آساما ئی دروازے کے باہر ایک با ئیسکو پ” وائٹ روز تھیٹر “ تعمیر کروایا یہ سینما بھی پشاور کے دیگر سینما ووں کی طر ح فعال تھی قیام پاکستان کے بعد سینما پشاور کے رئیس جان محمد خان کو الاٹ ہو گیا اس سینما کا نام تبدیل کر کے ” ناز سینما “ رکھ دیا گیا، پشاور میں مین جی ٹی روڈ پر قائم فردوس سینما اودیات کے معروف تاجر ایم اے حکیم کے چھو ٹے بھائی آغا جی اے گل نے بنوایا،اس سینما کی تعمیر دوسری جنگ عظیم 1945 کے بعد شروع ہو ئی اور 1974 میںاس کی تعمیر مکمل ہو ئی اس سینما کا شماراپنے وقت کے بہترین سینما میں ہو تا تھا ، پشاور کینٹ کے سینما کے بارے میں بتا یا جاتا ہے کہ کینٹ میں فلموں کی نمائش 1921-22 میں ہو ئی تاہم یہاں فوجی افسران کے علاوہ کسی اور کو فلم دیکھنے کی اجازات نہ تھی یہاں پر صرف خامو ش انگریزی فلموں کی نما ئش کی جا تی تھی ، 1931 میں یہاں دوبارہ بلڈنگ تعمیر کی گئی اور کا فی عرڈہ تک اسے گریزن سینما ہی کہا جا تا رہا آک کل یہ پاکستان ائیر فورس کے زیر اہتمام چل رہا ہے اور اسے ” پی اے ایف سینما “ کے نام سے موسوم کیا گیا ہے اس کے علاوہ کینٹ میں پرانے سینماووں میں ’ ڈی لیکس ، ڈی پیرس کو دوسری جنگ عظیم کے بعد بند کر دیا گیا تھا 1930-31 میں پشاور کے ایک سیٹھ ایشور داس ساہنی نے پشاور کینٹ میں اپنا ذاتی سینما ” کیپٹل سینما“ تعمیر کروایا یہ سینما اپنی نو یت کا خا ص سینما تھا جس کو ممبئی کے میٹرو سینما کے ڈیزائن پر بنایا گیا تھا یہ اس وقت کا جدید ترین سینما تھا جس میں انگریزی فلموں کی نمائش ہو تی تھی اور بعد میں اردو فلموں کی نما ئش بھی ہو ئی اس سینما کے مالک سیٹھ ایشور داس ساہنی کے انڈیا میں چالیس سینما گھر تھے تاہم ان کا ہیڈ آفیس پشاور میں ہی تھا اس سینما کے احاطے میں پرنٹنگ پریس بھی تھا جو کہ فلموں کے پرسٹر ز اور تصاویر پرنٹ کر تا تھا سینمامیں سوڈا وارٹر کی کانچ کی گولی والی بوتل کی مشین نصب تھی اور ڈرائی فروٹ ، نمکین دالیں ، مو نگ پھلی وغیر ہ لفافوں میں پیک کرکے ہندوستا کے سینما گھروں کو بھیجا جا تا تھا ،کینٹ میں ایک اور سینما ” لینسڈا “ جس کا نام تبدیل کر کے فلک سیر سینما رکھا گیا جو کہ اپنے وقت میں انگریزی اور اردو فلموں کی نمائش میں پیش پیش رہا ، دہشت گردی سے متاثر صوبے میں جہاں شہریوں کو تفریحی مواقع میسر نہیں ہیں وہاں شہریوں میں ذہنی تنا وع بڑھ رہا ہے حکومت کی جانب سے سینما کلچر کے فروغ کےلئے اقدامات نہ ہو نے سے شہریوں میں ما یوسی پھیل رہی ہے، چند دھا ئی قبل پشاور میں فیملی کے ہمراہ فلم دیکھنے کا رواج تھا جو کہ قصہ پا رینہ بن چکا ہے صوبائی دالحکومت پشار میں سینما کلچر آخری ہچکولے لے رہا ہے اس وقت پشاور میں گنتی کے چند سینما فعال ہیں جن میں سینما روڈ پر پکچر ہا وس اور تصویر محل ، سویکارنو چوک میں صابرینہ اور ارشد سینما ، جبکہ کینٹ میں کیپٹل سینما شامل ہیں،کچھ عرصہ قبل ہی سینما روڈ میں ناولٹی سینما ، فلک سیر پشاور کینٹ ، فردوس شبستان سینما ، میڑو سینما کو ختم کرکے بڑے بڑے پلازوں میں تبدیل کر دیا گیا ہے جبکہ گلبہار میں واقع عشرت سینما کئی سالوں سے بند پڑی ہے پشاور میں باقی رہ جانے والے سینما وں کshama-cenma-ka-baroni-manzartsweer-mahal-cinmapicter-houne-cinma-ka-manzar

sabiqa-frdos-cenma-palaza-banny-jarha-hy
sabiqa firdos ( shabistan) cenma par bany wala plaza

sabiqa-nawlty-cinmaa-ka-manzr-jaha-palaza-bna-diyz-giya-hyی حالت بھی انتہا ئی خستہ ہے ، صوبائی دارلحکومت سیمت صوبے کے دیگر اضلاع میں بھی یہی حال ہے کو ہا ٹ ، بنوں ، ڈیرہ اسماعیل خان ، کو ہاٹ ، نو شہرہ ، اور مردان میں تیزی سے سینما گھروں کو پلا زوں اور کمر شل سرگرمیوں میں تبدیل کیا جا رہا ہے ، پشاور میں سینما گھروں کی ویرانی میں حکومت اور فلمی دنیا سے وابسطہ افراد نے کردار ادا کیا وہاں رہی سہی کسر دہشت گردی نے پوری کر دی ، 2فروری کو سینما روڈ پر واقع پکچر ہا وس سینما میں پشتو فلم ” ضدی پختون “ کی نمائش کے دوران نامعلوم افراد کی جانب سے دوران شو ہینڈ گرنیٹ حملہ کیا گیا جس کے نتیجے میں 7افراد جاںبحق اور 30 سے زائد زخمی ہو ئے اسی طر ح چند روز بعد 11فروری کو باچا خان چوک کے قریب شمع سینما میں بھی شو کے دوران ھینڈ گرنیٹ حملہ کیا گیا جسمیں 14 افراد جاںبحق اور 23 زخمی ہو ئے مذکو رہ واقعات کے بعد شائقین کے ذہنوں میں خو ف و ہراس پھیل جانے سے پشاور کے سینما گھر ویران ہو گئے، اسی طر ح ایک ریلی کے دروان مظاہرے اور توڑ پھوڑ پر مشتعل مظاہرین نے شبشتان سینما کو آگ لگا دی جس کے بعد شبستان سینما فروخت کر دیا گیا ، دہشتگرود ں سے خائف سینما مالک دب کر بٹیھ گئے اسی دوران کیپٹل سٹی پولیس نے سینماوں میں سیکورٹی کے نام مالکان کے خلاف مقدمات کا سلسہ شروع کیا اور درجنوں مقدمات نا قص سیکو رٹی کی بناءپر درج کئے گئے ہیں ، جس کے باعث بیشتر سینما مالکان اس کاروبار سے کنارا کش ہو کر دیگر کا روبار کی جانب راغب ہو رہے ہیں جس سے خیبر پختونخوا میں سینما کلچر دم توڑ رہا ہے ، ضرورت اس امر کی ہے کہ صوبا ئی حکومت پشاور میں سینما کلچر کے فروغ کےلئے عملی اقدامات اٹھائے تاکہ دہشت گردی سے متاثر شہریوں کو سستی تفریح کے مواقع میسر ہوں

Advertisements

wall city peshawar

رپورٹ و تصاویر
شہزادہ فہد

پشاور پاکستان کے شمال مغربی حصے میں واقع ہے اس کا شمار پاکستان کے بڑے شہروں میں ہو تا ہے ، وسطی جنونی اور مغربی ایشیاءکے قدیم ترین شہروں میں سے ایک ہو نے کی وجہ سے پشاور صدیوں سے افغانستا ن جنو بی ایشیاء، وسطی ایشیاءاور مشرق وسطی کے درمیان ایک مرکز کی حیثیت سے قائم چلا آرہا ہے ، محکمہ آثار قدیمہ خیبر پختونخوا کے مطابق پشاور کو دنیا بھر میں یہ اعزاز حاصل ہے کہ یہ شہر ہر دور میں آباد چلا آ رہا ہے ،وید دیومالا میں پشاور اور آس پاس کے علاقے کو “پشکلاوتی” کے نام سے جانا جاتا ہے جو “رامائن” کے بادشاہ “بھارت” کے بیٹے “پشکل” کے نام سے منسوب ہے۔ تاہم اس بارے ابھی کوئی یقینی رائے موجود نہیں ہے مصدقہ تاریخ کے مطابق اس علاقے کا عمومی نام “پورش پورہ” (انسانوں کا شہر) تھا جو بگڑ کر پشاور بن گیا۔ دوسری صدی عیسوی میں مختصر عرصے کے لئے وسطی ایشیاءکے توچاری قبیلے “کشان” نے پشاور پر قبضہ کر کے اسے اپنا دارلحکومت بنایا۔اس کے بعد 170 تا 159 ق م اس علاقے پر یونانی باختر بادشاہوں نے حکمرانی کی اور اس کے بعد مملکتِ یونانی ہندکے مختلف بادشاہ یہاں قابض ہوتے رہے۔ ایک تاریخ دان کے مطابق پشاور کی آبادی 100 عیسوی میں ایک لا کھ بیس ہزار کے لگ بھگ تھی اور اس وقت آبادی کے اعتبار سے دنیا کا 7واں بڑا شہر تھا۔ بعد میں پارتھی، ہند پارتھی، ایرانی اور پھر کشان حکمرانوں نے قبضہ کئے رکھا۔ 1812 میں پشاور پر افغانستان کا قبضہ ہوا لیکن جلد ہی اس پر سکھوں نے حملہ کر کے اپنی سلطنت میں شامل کر لیا مہاراجہ رنجیت سنگھ نے پشاور پر قبضہ کر کے یہاں کا دورہ کیا اور 1834 میں اسے سکھ ریاست میں شامل کر لیا ،2008 میں پاکستان میں سکھوں کی سب سے بڑی تعداد پشاور میں ہی آباد تھی،پشاور میں تاریخی دروازوں کی تعمیر سکھوں کے دور میں ہوئی تھی جب سکھوں نے یہ اندازہ لگا لیا تھا کہ پشاور کو مضبوط کیے بغیر وہ علاقے پر اپنا کنٹرول نہیں رکھ سکتے اور یہی وجہ ہے کہ سکھوں کے دور میں پہلی بار پشاور کے اردگرد موجود مٹی کی بنی ہوئی فصیل کو پختہ کیا گیا۔ اس سے پہلے بھی پشاور کی دیوار پناہ میں دروازے موجود تھے لیکن سکھوں نے ان دروازوں کی تعداد میں اضافہ کیا، حالیہ حکومت نے پشاور کے قدیم تاریخی فصیل کو محفوظ کر نے کےلئے ایک منصوبے منظور کیا جسے ”وال سٹی کا نام دیا گیا تاہم بد قسمتی سے ایک سال کا عرصہ گزرنے کے باوجود منصوبے میں کو ئی خاطر خواہ پیش رفت نہ ہو سکی ،پشاورشہر میں سکھ دور میں تعمیر شدہ فصیل شہر کی بحالی کا منصوبہ ایک سال میں سروے بھی مکمل نہ ہو سکا گزشتہ سال 2015میں محکمہ آثار قدیمہ و عجائبات خیبر پختونخوا کوفصیل شہر کی بحالی کے منصوبے کےلئے20ملین روپے منظور کئے گئے تھے تاہم ایک طویل عرصہ گزرنے کے باوجود پراجیکٹ سست روی کا شکا ر ہے، پشاور کی چار دیوار ی اور 16تاریخی دروازوں کی تزئےن و آرائش و حفاظت کےلئے بلیجیم یونیورسٹی کی مددد سے نئی وال سٹی تعمیر کرنے کا منصوبہ بنا یا گیا تھا ، آرکیالوجی اینڈ میوزیمزحکام نے وال سٹی کو اتھارٹی میں تبدیل کر نے کا عندیہ دیا تھا تاہ

م ایک سال کا طویل عرصہ گزرنے کے باوجواس ا نٹرنیشنل سطح کے پراجیکٹ پر کام ہوتا دکھائی نہیں دے رہا،رامداس بازار سے شروع ہونی قلعہ نما دیوار حکام کی خاموشی کے باعث اپنی اصل حالت کھورہی ہے جبکہ ٹھنڈ ا کھوئی گیٹ سے کچھ آگے دیوار کو گرا گیراج میں تبدیل کر دیا ہے اسے آگے کوہاٹی گیٹ تک دیوار کا نام و نشان بھی باقی نہیں رہا ، کوہاٹی گیٹ سے چند قدم کے فاصلے پر پھر سے فصیل شہر اپنی اصل حالت میں موجود نظر آتی ہے تاہم مناسب دیکھ بھال نہ ہونے کے باعث اس دیوار کو بھی جگہ جگہ سے توڑا جارہا ہے یہ دیوار کوہاٹی ٹیڈی گیٹ تک اپنی اصل حالات میں موجود ہے دیوار کے اوپر شہری رہائشیوں نے حفاظتی جنگلے بھی نصب کئے ہوئے ہیں ، یکہ توت گیٹ کے قریب بھی دیوار کا کچھ حصہ بچا ہوا ہے ، یکہ توت سے نشتر آباد چوک تک یہ دیوار مکمل طور پر غائب ہو چکی ہے، دیوار کو ختم کرکے گھر، مارکیٹ اور دوکانیں قائم کر دی گئی ہیں، حکومت کی جانب سے پراجیکٹ کو مکمل کرنے کےلئے کوالیفائےڈ اسٹاف بھرتی کیا گیا، تاہم کارکردگی صفر رہی ،پراجیکٹ کو بہتر انداز سے مکمل کرنے کےلئے پراجیکٹ میں کنزرویشن اسسٹنٹ، آرکیالوجسٹ ، آرکٹیکچر اور دیگر ماہرین کی پوسٹیں رکھی گئی تھیں جن پر گزشتہ سال سے ہی بھرتیاں مکمل کرلی گئی جبکہ لاہور وال اتھارٹی منصوبے میں کام کرنےوالے ایک افسر کو پراجیکٹ ڈائرےکٹر تعینات کیا گیا ہے جوکہ اس وقت محکمہ کلچرل خیبر پختونخوا کے مختلف پراجیکٹس میں بھی انتظامات چلا رہے ہیں ذرائع کے مطابق پراجیکٹ میں بھرتی ہونےوالے ملازمین کو بھاری تنخواہیں دی جارہی ہے لیکن پھر بھی کارکردگی صفر ہے ، ڈیفنس کالونی میں لاکھوں روپے ماہانہ پر ایک بنگلہ خرید کر پراجیکٹ آفس قائم کیا گیا ہے لیکن اس کے باوجود اس پراجیکٹ کا سارا عملہ تحصیل گورگٹھڑی میں موجود ہے جبکہ سرکاری رقم حاصل کر دہ بنگلہ بھوت بنگلے کا منظور پیش کر رہا ہے ،انٹرنیشنل سطح کے اس پراجیکٹ میں جہاں قدیم شہر پشاور کی اصل حالت میں آنے کے ساتھ غیر ملکی سیاحوں کو اپنی طرف راغب کر ے وہاں پشاور کے تاریخی ہنروں مثلاً تنکا سازی ، قراقلی، رباب بنانا وغیر ہ کے فن کو زندہ رکھنے کےلئے بھی بڑی رقم مختص کی گئی ہے جس کے تحت پشاور کے شہریوں کو یہ قیمتی ہنر سکھایا جا رہا ہے جس کےلئے اس ہنر میں پشاور شہر کے ماہر استادوں کی خدمات حاصل کی گئی ہے جبکہ کام سیکھنے والے ہنر مندوں کو بھی ماہانہ وظیفہ دیا جائےگاکام سیکھنے کا دورانیہ چار ماہ تک ہو گا جس کے بعد شاگردوں کو تعریفی سرٹیکفیٹ دئےے جائےنگے ، وال سٹی پراجیکٹ کے حوالے سے محکمہ آثار قدیمہ کے فوکل پرسن نو از الدین صدیقی نے بتا یا کہ وال سٹی پراجیکٹ پر کام جا ری ہے ، انھوں نے بتا یا کہ اس سلسلے میں پہلے مرحلے میں فصیل شہر کے اطراف میں قائم پرانی آباد ی پر سروے کیا جا رہا ہے جبکہ دوسرے مرحلے میں لسٹیں تیار کرکے زیا دہ متاثر مقامات پر فصیل شہر کی تعزین و آرائش کی جا ئے گی ، پراجیکٹ کےلئے کرایہ پر بنگلہ حاصل کر نے کے بارے میں ان کا موقف تھا کہ مذکورہ جگہ پر پراجیکٹ ڈائر یکٹر کےلئے مختص کی گئی ہے جہاں پرا جیکٹ کے متعلق دستایز اور دیگر ضروری معمالات حل کئے جا تے ہیں جبکہ پراجیکٹ کا دیگر سٹاف گور گھٹری میں مو جود ہوتا ہے انھوں نے بتا یا کہ 3 سالوں کے اس پراجیکٹ میں پشاور کا نقشہ تبدیل ہو جا ئے گا ،چےئرمین تحریک انصاف عمران خان کی خصوصی دلچسپی کے باعث یہ بین الاقوامی سطح کا منصوبہ پشاور میں پیش کیا گیا تاہم ایک سال کا طویل عرصہ گزرنے کے باوجود کوئی خاص پیش رفت نہ ہو سکی، ڈائرےکٹر آرکیالوجی اینڈ میوزیمز خیبر پختونخوا ڈاکٹر عبد الصمد نے وال سٹی اتھارٹی کے نام سے آرگنائزیشن بنانے کا عند یہ بھی دیا تھا جو کہ ان گیٹس اور چار دیوار کی حفاظت ، تزئےن و آرائش و دیگر معاملات پر نظر رکھے گی دوسری جانب اس چار دیوار ی کے اندر موجود سیٹھی ہاﺅس ، دلیپ کمار ہاﺅس ، گھنٹہ گھر ، گورگٹھڑی پشاور اور دیگر مقامات کی تزئین و آرائش کا عہد بھی کیا گیا تھا جبکہ اس تاریخی چار دیواری کے اندر واکنگ ٹریک بھی تعمیر کیا جانا ہے جہاں گاڑیوں کو جانے کی اجازت نہیں ہو گی پشاور کی عوام اور تاجر برادری بھی شہر کے اندر واکنگ ٹریک اور شہر کی تزئین و آرائش چاہتی ہے جسکو مد نظر رکھتے ہوئے شہر کو مزید خوبصورت بنایا جاسکتا ہے ، پشاور شہر میں برسوں سے قائم رہائشی گھروں، مارکیٹوں اور دوکانداروں کو ہٹانے کوئی آسان کام نہیں ہو گا کیونکہ یہ سب گزشتہ کئی دہائےوں سے یہاں پر بس رہے ہیں بعض گھروں کے رہائشیوں اورپلازہ مالکان کے مطابق اس وقت انکے پاس ان جگہوں کے انتقال اور رجسٹری کاغذات بھی موجود ہیں جس کے تحت انکے بزرگوں نے فصیل شہر میں قائم زمین خرید یں تھی اور وہ اسکا باقاعدہ سے ٹیکس بھی جمع کر وارہے ہیں واضح رہے کہ لاہور وال سٹی منصوبے کے دوران بھی وال سٹی کے عملے اور تاجروں کے دوران کئی جھڑپےں ہوئی جس میں کئی تاجر دوکاندار وں کو جانی و مالی نقصان ہو ا تھا، صوبائی حکومت کو بھی لاہور جیسے واقعات سے بچنے کےلئے جامع حکمت عملی اپنانے کی ضرورت ہو گیَپشاور کے باسیوںکا کہنا ہے کہ فصیل شہر کی بحالی اب کوئی آسان کام نہیں رہا شہر بھر میں فصیل کے اطراف میں نئی آبادیاں بنائی جا رہی ہیں جو کہ حکومت کےلئے چیلنج ثابت ہو سکتی ہیں، حکومتی دلچسپی اور تحفظاتی اقدامات کے باعث اس تاریخی دیوار کواپنی اصل حالت میں بحال کیا جاسکتا ہے جوکہ وقت کی ضرورت ہے ۔